پاکستان

پرویز الٰہی اور شجاعت حسین کے اختلافات کی اندرونی کہانی

وزیر اعلیٰ پنجاب چوہدری پرویزالٰہی کے صاحبزادے مونس الٰہی نے کہا ہے کہ ان کے اورچوہدری شجاعت حسین کے خاندان کے مابین اختلافات کا آغاز دراصل جائیداد کے معاملے پرہوا تھا۔مونس الٰہی کے ساتھ اپنی ایک ملاقات کی کہانی بیان کرتے ہوئے جاوید چوہدری کہتے ہیں کہ مونس الٰہی سے ملاقات ان کی اپنی خواہش پر ہوئی۔ ان کا کہنا تھا آپ مجھ سے جو بھی پوچھیں گے میں آپ کو سچ سچ بتاؤں گا اورفیصلہ آپ پر چھوڑ دوں گا۔ چنانچہ میں نے پہلا سوال کیا کہ ’’آپ جب عمران خان سے ملاقات کے لیے بنی گالا گئے تھے تو کیا چوہدری شجاعت کو ڈیل کا علم تھا؟‘‘ مونس ہنس کر بولے’’ماموں کو سو فیصد معلوم تھا اورہم ان کی مرضی سے گئے تھے۔ آپ جانتے ہیں دوسری منزل پر چوہدری شجاعت اور پرویز الٰہی کے کمرے آمنے سامنے ہیں اور درمیان میں لاؤنج ہے۔ میرا کمرہ بھی وہیں ہے، ملاقات سے پچھلی رات چوہدری شجاعت صوفے پر لیٹے ہوئے تھے۔ ہم سب ان کے سامنے بیٹھے تھے، ماموں نے کہا‘ ہم نے بس سی ایم بننا ہے خواہ ہمیں کالا چور بنائے۔ میں نے ماموں سے پوچھا اگر ن لیگ اور پی ٹی آئی کی چیف منسٹری میں سے کسی ایک کا فیصلہ کرنا ہو تو کون سی بہتر ہوگی؟ ماموں کا جواب تھا، عمران خان۔ اس پر میں نے انھیں بتایا کہ کل صبح پی ٹی آئی کا وفد گھر آ رہا ہے۔ میں نے انکو بتایا کہ پی ٹی آئی والوں کو میں نے کہہ دیا ہے آپ کے پاس اگر ٹھوس آفر ہے تو آپ آئیں ورنہ ہماری طرف سے انکار ہے۔ ماموں نے کہا‘ ٹھیک ہے آپ بات کرو۔ اگلے دن پرویز خٹک‘ شاہ محمود قریشی اوراسد عمرآ گئے‘ یہ واپس گئے تو مجھے وزیراعظم کے ایم ایس کا فون آگیا۔

Related Articles

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button